Saturday, December 7, 2013

Medication and Medical Profession in Circle Bakote......... Past and Present

Searched and Written by 
MOHAMMED OBAIDULLAH ALVI
(Journalist, Historian and Anthropologist)
*********************************************
Daily Aaj Peshawar, 07th Jan, 2015
Health is an essential element if human life. Health problems invented medical sciences and experts of human health issues called Medical Practitioners, Sunyasies, Hakeem and Doctor. There are a few kind of health sciences are practicing in World today.
Healthcare science, also known as medical science or bio-medical science, is a set of applied sciences applying portions of natural science or formal science, or both, to develop knowledge, interventions, or technology of use in healthcare or public health.[1]Such disciplines as medical microbiologyclinical virologyclinical epidemiologygenetic epidemiology, and bio-medical engineering are medical sciences. Explaining physiological mechanisms operating in pathological processes, however, patho physiology can be regarded as basic science. <Read more>
Allopathy is a system of medical therapy in which a disease or an abnormal condition is treated by creating an environment that is antagonistic to the disease or condition; for example, an antibiotic toxic to a pathogenic organism is administered to treat an infection. <Read more>
HomeopathyListeni/ˌhmiˈɒpəθi/ (also spelled homoeopathy or homœopathy; from the Greek hómoios- ὅμοιος- "like-" + páthos πάθος "suffering") is a system of alternative medicine created in 1796 by Samuel Hahnemann, based on his doctrine of like cures like, according to which a substance that causes the symptoms of a disease in healthy people will cure similar symptoms in sick people.[1] Homeopathic remedies are found to be no more than a placebo,[2] and homeopathy is widely considered a pseudoscience.[3][4][5][6][7] <Read more>
Ayurveda (Sanskrit Āyurveda आयुर्वेद, "life-knowledge"; English pronunciation /ˌ.ərˈvdə/[1]) or Ayurvedic medicine is a system of traditional medicine native to the Indian subcontinent and a form of alternative medicine. The oldest known ayurvedic texts are the Suśrutha Saṃhitā and the Charaka Saṃhitā.[2] These Classical Sanskrit texts are among the foundational and formally compiled works of ayurveda. <Read more>
Ayurveda in Circle Bakote
Circle Bakote is in practice of human treatment with local herbs since millenniums. Sunyasies (Herbal Doctors) were handled illness and sickness with Kakhs (Herbs) and people believed them unconditionally with blind faith. They had many powders (Safoof) and syrups (Sharbat) for release of pain and long illness. They advised people to use blood of animals for restoration of their sex power, use mushroom for relief in nerves pain and white meet for the best health care. They used a mixture of powerful food for woman after delivery that prepared by dry fruits, gee and floor. They have a composition of medicine named OKLAIT used in belly pain relief. They used cuts in Cathartic pain relief.  The also invented a special food called OREYA, made by milkshake, oily seeds powder and melon. It was a very delicious recipe of that time. They also introduced BOHLY, a milky dish made by first milk of animal after delivery. Hakim Qzi Zafir ul Haq Alvi Chishti of Basian, Hakim Molana Mian Mohammed Abdullah Alvi, Mian Abd u Rashid Awan of Birote and Qazi Abdurahman of Kaho East were renowned Herbal Doctors of Circle Bakote in near past.
HAKEEM QAZI ZAFEER UL HAQ ALVI CHISHTI
World fame herbal doctor of Rawalpindi, belonged to Union Council Birote’s northern last end i.e. Basian
Herbs of Circle Bakote
 These plants were grown by a plant enthusiast and you will not find any wild plants of hydrangea over there. There are two variants available there. The tall one which is common one. The dwarf one is perhaps imported one.Clematis, queen of flowering vine. This is true wild clematis species in Circle Bakote, Galyat & Murree Hills and other Galiyat region native to hilly areas. This one seems to be clematis Armanda i guess. Fragrant large flowers in clusters. Chrysanthemum leucanthemum daisy. Another wild flower of  Circle Bakote, Galyat & Murree Hills is full of these honeysuckle shrubs. I thought they might be lonicera japonica but it is a climber not a small tree. So it is some lonicera shrub or small tree with mildly fragrant flowers. The yellow iris flowers. They are not wild but grown in many home gardeners in the Circle Bakote, Galyat & Murree Hills. Lupin, another plant which likes cool climate. flowers are small and stalks are never as tall. <Read more>
Allopathy
There were no Basic Health Unit, Rural Health Center or doctors before independence. First BHU established in Ayoubia and Bakote in 1964 by Parliamentry Secretery Sardar Anaet u Rehaman Abbasi. Other BHUs and RHCs in all union Councils of Circle Bakote established by Sardar Mehtab Ahmed Khan during 1986-1999. Sardar Mehtab Ahmed Khan also appointed Doctor Chohdri Zafir of Khan Khurd (The first MBBS of Circle Bakote) as Director Health District Abbottabad in 1997. He established first Terbocolysis Center in Mohrha, Birote Khurd in 1998 and BHU in Birote in 1997. He also appointed Doctor Ilyas H Shah (First MBBS Doctor  of Birote) first time in BHU Malkote and then in Birote. There are many more doctors are practicing in Circle Bakote besides a Sikh Khalsa Doctor in Lahoor, Birote Khurd. Doctor/ Hakim Mehmood Ahmed Jadoon Qadri of Osea, Murree also started his medical career from Birote. An other doctor named Abdul Qayoum Khan started his clinic in Birote in 1964. Doctor Javaid, Doctor Masood Alvi, Shuaib Shah practiced in Birote a few years ago. Now there are two female doctors belonged to Union Council Birote, one is Dr. Sumaira Altaf daughter of Altaf Abbsi, worked in Holy Family Hospital Rawalpindi and second is Dr. Ayesha Muneer daughter of Muneer Abbasi who serving in Cival Hospital, Chak Shazad Islamabad.
 Mohrha BHU ..... one of medical institution in Circle Bakote
No medical amnesty for local people
Latest situation written by
BILALA BASEER ABBASI
(The Frontier Post Peshawar, 23rd Feb, 2016)
Dr. Ilyas H Shah, first MBBS of Birote
He is Incharge Doctor of BHU Birote
Dr. Ilyas H Shah is younger son of Syed Ghulam Nabi Shah, first co-transporter of Birote in Allied Chiragh Din Bus Service in Rawalpindi and Srinager. He is also nephew of Syed Fazal Husain Shah, first teacher and noble man of his tribe. He got his primary education from GPS Birote and metreculation from High School Osea, Murree, FSc from Karachi and MBBS from Medical Universitry Jamshoro, Sindh on Azad Kashmir cota. He appointed in BHU Malkote first time, than transfereed to BHU Mohrha, Birote Khurd. He is Incharged Doctor of Birote now since 15 years.
Dr. Israr Abbasi of Basian, is second MBBS of UC Birote.
He is currently working as Kingdom of Saudi Arabia Senior fellow in 'Emergency Medicine' at King Faisal Specialist Hospital And Research Centre jeddah
(To be Continued) 

Dr. Adil Ramzan Awan of Birote
House Physician at Banezir Bhuto Hospital Rawaalpindi

Dr Adil Ramzan Abbasi born at Dhoke Thathi, UC Birote on 8th August, 1989 in a midle class family. He matriculated from Seyed Ahmed Shaheed Academy (SASA Education System), a prestigious private educational institution of Birote, FSc from IMCB G-10/4. Islamabad, MBBS from Bannu Medical College under Khyber Medical University and also done various CME courses from Horwerd Medical University. He is operated a medical website . He is also founder of Medicotips.com, The Health Encyclopedia and Medical Education Health. He was President of his last college literary society and he is going to compile his literary work <Read More>
A swelling patient's feet are in salty hot water, it was a treatment in old days
سرکل بکوٹ میں سرکاری اساتذہ اور پیرا میڈیکل سٹاف 
کی طرف سے
 بیروز گار مقامی نوجوانوں کونوکریاں فراہم کی جا رہی ہیں

----------------------------
موہڑہ بی ایچ یو کی ایل ایچ وی نے بھی بیروٹ خورد کی خواتین کیلئے اپنی ذاتی جیب سے ایک دائی صاحبہ کا بندوبست بھی کر رکھا ہے۔-----------------------------
چار ہزار روپے میں ان ہائوس گائینی کی ساری سہولیات ایک ہی چھت تلے دستیاب ۔۔۔۔۔ ہر کیس کے چار ہزارمیں سے40 فیصد کمیشن دائی صاحبہ کا حق ہوتا ہے ۔
-----------------------------
اگر ایل ایچ وی اور دائی صاحبہ گائنی سہولیات کے ساتھ صرف چار ہزار معاوضہ لیتی ہیں تو بیروٹ خورد کی خواتین کو ان کا مشکور ہونا چائیے ۔۔۔۔ 

بیروٹ کی اسلام آباد میں ایک خاتون صحافی کی رائے
----------------------------
سمبھلانیاں سکول کے استاد نے دو مختلف کورسز کے دوران ہم سے چار سو روپے بھتہ وصول کیا، اساتذہ کا الزام ۔۔۔۔۔ یہ پیسے ریفریشمنٹ کیلئے خود انہوں نے اپنی مرضی سے دیئے ۔۔۔۔ سجاد عباسی
-----------------------------
بھن بیروٹ خورد میں حکومت نے پرائمری سکول کی شاندار بلڈنگ تو بنا دی مگر ۔۔۔۔ پانچ کلاسوں کے ستر طلباء و طالبات کیلئےچار میں سے صرف ایک ٹیچر تعینات کر دی ۔۔۔۔ بچوں کا مستقبل دائو پر لگ گیا ۔۔۔۔۔ ذمہ دار کون؟
*******************************

بھوکے کو کھانا کھلانا ۔۔۔۔ ننگے کو کپڑے پہنانا اور ۔۔۔۔ اور ۔۔۔۔ اور بے روزٍگار کو کام دینا یا دلوانا عبادت نہیں تو اور کیا ہے ۔۔۔۔ مگر جب 70 ہزار سے ایک لاکھ روپے تنخواہ وصول کرنے والا ایک سینئر ٹیچر اپنے آگے ۔۔۔۔۔ کسی مقامی گریجویٹ کو 8 ہزار روپے کی نوکری دے کر اپنے فرائض سے سبکدوش ہو جاوے تو ۔۔۔۔۔ کیا آپ اسے پیشہ انبیاء کا نمائندہ استاد کہہ سکیں گے ۔۔۔۔ کیا وہ جو تنخواہ گھر لے جا رہا ہے وہ اس پر حلال ہو گی ۔۔۔۔۔ ؟ یہ کوئی ڈھکی چھپی بات تو ہے نہیں ۔۔۔ کے پی کے حکومت نے محکمہ تعلیم میں اچانک چھاپے اور مانیٹرنگ کا نظام بھی اپنایا ہوا ہے اور وہ کسی بھی سکول میں جا کر وہاں موجود ٹیچر سے بائیو میٹرک سسٹم کے تحت انگوٹھا بھی لگواتے ہیں مگر ۔۔۔۔۔ یہ سوال اپنی جگہ اہم ہے کہ مانیٹرنگ اہلکار سکول آنے سے پہلے ماسٹر صاحب کو اطلاع کر دیتا ہے کہ جناب ۔۔۔۔۔ اپنے نجی کاروباری کام سے کچھ وقت نکال کر آکر انگوٹھا لگا جاویں ۔۔۔۔۔ اور میرے قارئین جانتے ہیں کہ اس حاضری کے عوض اس مانیٹرنگ کرنے والے پیٹی بھائی کو ۔۔۔۔ بڈی (Badhi) ۔۔۔۔ یعنی نذرانہ     میرے محترم اساتذہ کرام بلکہ انہیںبنجاب کی طرح ماسٹر جی (ہمارے ہاں زلف تراش، پاپوش ساز اور عام دکاندار بھی ماسٹرکہلاتا ہے) کہیں تو درست ہو گا، کی طرف سے مقامی اعلیٰ تعلیم یافتہ بیروزگاروں کو نوکریاں دینے کے نظام کی شاندار کامیابی کے بعد ۔۔۔۔ سرکل بکوٹ کے بی ایچ یوز اور آر ایچ سیز کے ڈاکٹر صاحبان، ایل ایچ ویز اور دیگر سینئر طبی عملہ ۔۔۔۔۔ بھی مقامی بیروزگار سائنس کے ساتھ میٹرک اور ایف ایس سی کرنے والے پڑھے لکھے افراد کو نوکریاں دے رہے ہیں اور خود یا تو ان سے کام کا کمیشن بوصول کرتے ہیں یا اپنا سرکاری وقت وہ ۔۔۔۔ اس افراط زر کےزمانے میں پیدائش زر کیلئے استعمال کر رہے ہیں ۔۔۔۔ آج صبح میں ابھی سویا ہوا تھا کہ بیروٹ خورد کی ایک بیٹی کا فون آیا ۔۔۔۔۔ اس نے جو انفارمیشن دی اس سے تو میرے پائوں کے نیچے سے زمین نکل گئی ۔۔۔۔ یہ بیٹی ایک ماں بھی ہے اور چند روز پہلے ہی اس کے آنگن میں ایک ننھی سی دختر کوہسار بھی اتری ہے ۔۔۔۔ اس بیٹی کا کہنا تھا کہ بی ایچ یو موہڑہ، بیروٹ خورد کی ایک مقامی ۔۔۔۔ ایل ایچ وی محترمہ آمنہ زبیر صاحبہ ۔۔۔۔ ہیں، وہ اپنے کام کی ماہر اور ہر زچہ بچہ کی خصوصی طور پر دیکھ بھال بھی کرتی ہیں ۔۔۔۔ زچگی کو کئی ماہ پہلے ہی بک کر لیتی ہیں ۔۔۔۔ انہوں نے بھی ایک مقامی دائی ۔۔۔۔ محترمہ فرزانہ صاحبہ ۔۔۔۔ کو نوکری دے رکھی ہے اور بی ایچ یو موہڑہ کے بجائے وہ ہر زچہ کو اس کے گھر میں زچگی کی ساری سہولیات فراہم کر رہی ہیں، اس عمل میں زیادہ محنت دائی صاحبہ کو کرنا پڑتی ہے اور بی ایچ یو میں دستیاب زچگی کی سرکاری ادویات کے ذریعے وہ اس علاج معالجے کا کچھ نہیں ۔۔۔۔ بس 4 سے 5 ہزار روپے اعزازیہ وصول کرتی ہیں، اس اعزازیہ کا 40 فیصد دائی صاحبہ کا ہوتا ہے جبکہ باقی ایل ایچ وی صاحبہ کی پاکٹ کی نذر ہو جاتا ہے ۔۔۔۔۔ میں نے اس اہم نسوانی مسئلہ کے بارے میں خود رائے دینے کے بجائے اپنی اہلیہ محترمہ ۔۔۔۔۔ فرحت جبین علوی ۔۔۔۔۔ سے رائے لی (میری اہلیہ بھی اسلام آباد کے ایک موقر روزنامے میں سینئر جرنلسٹ ہیں) اس سلسلے میں ان کا کہنا تھا کہ ۔۔۔۔۔ جو ایل ایچ وی خواتین کے گھر جا کر 4ہزار روپے میں کیس کرتی ہیں ان کی خدمات کے عوض یہ رقم کچھ بھی نہیں ۔۔۔۔ اگر آپ بیروٹ کے کسی علاقے سے بھی زچگی کے کیس کیلئے مری، مظفر آباد، ایبٹ آباد یا راولپنڈی اسلام آباد کے کسی سرکاری ہسپتال میں آتے ہیں تو آپ کے دس سے 15ہزار کے اخراجات معمولی بات ہیں اور پھر ان ہسپتالوں میں خواتین میں زچگی کے دوران جو طبی پیچیدگیاں پیدا ہوتی ہیں کہ بعض اوقات ڈاکٹروں کے اناڑی پن کی وجہ سے وہ دوبارہ ماں بھی نہیں بن سکتیں ۔۔۔۔ اس کے علاوہ بچے تبدیل ہونے کی شکایات بھی عام ہیں ۔۔۔۔۔ میری اہلیہ محترمہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ بی ایچ یو موہڑہ میں تعینات ایل ایچ وی اور اس کے پے رول پر دائی صاحبہ کا خواتین علاقہ پر احسان ہے اور انہیں ان دونوں خواتین کا شکریہ ادا کرنا چائیے ۔۔۔۔۔ علوی صاحب، آپ اور آپ جیسے ہزاروں لوگ تو گائوں میں ہی پیدا ہوئے، اس زمانے میں یا اس سے پہلے کون سی ایل ایچ وی یا گائناکالوجسٹس بیروٹ یا بیروٹ خورد میں موجود تھیں ۔۔۔۔ یہی تجربہ کار خواتین تھیں جو ہماری     ٹیچرز حضرات نے ایک اور شکایت کی ہے کہ ۔۔۔۔۔ گزشتہ دنوں ماڈل سکول سمبھلانیاں، ترمٹھیاں میں محکمہ تعلیم کی طرف سے اساتذہ ٹریننگ کیلئے برٹش کونسل اور PITC کورسز کے دوران سینٹر انچارج سجاد عباسی نے مبلغ ایک سے تین سو روپے بھتے کی صورت میں وصول کئے ۔۔۔۔ اس مسئلہ کی تصدیق یا تردید کیلئے راقم السطور نے سجاد عباسی سے رابطہ کیا اور ٹیچرز سے بھتہ وصولی کے بارے میں پوچھا تو ان کا موقف تھا کہ ۔۔۔۔ یہ پیسے خالصتاً ان کورسز کے شرکاٗء کی ریفریشمنٹ کیلئے انہی کی تجاویز اور مرضی سے وسول کئے تھے اور تمام رقم سے ان کیلئے ریفریشمنٹ کا بندو بست کیا تھا کیونکہ یہ اساتذہ دور دراز سے آئے تھے ۔۔۔۔۔ اگر وہ اسے بھتہ کہتے ہپیں تو آئندہ ان سے کچھ بھی وصول نہیں کیا جاوے گا ۔
    بیروٹ خورد کی وارڈ بھن میں ۔۔۔۔۔ کے پی کے حکومت نے ایک ڈبل سٹوری خوبصورت سکول تعمیر کیا ہے۔۔۔۔۔ اس پر زرد اور ہرے پینا فلیکس بھی لگے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔ راوی نے یہ تو نہیں بتایا کہ اس میں کرسیوں اور ڈیسک پر بچے بیٹھتے ہیں یا ٹاٹوں پر ۔۔۔۔ تاہم یہاں پر طلباء و طالبات کی پانچ کلاسوں میں تعداد 70 ہے ۔۔۔۔ میری خالہ سعیدہ خانم مرحومہ اور بیروٹ بکوٹ کی متحدہ یو نین کونسل کے جنرل کونسلر حاجی برکات خان مرحوم کے پڑوس میں واقع اس سکول میں ٹیچرز کی چار اسامیاں ہیں جبکہ یہاں پر ایک خاتون ٹیچر ۔۔۔۔ محترمہ انیلہ بی بی آف بکوٹ ۔۔۔۔ تدریس کے فرائض انجام دے رہی ہیں، یہاں پر بکوٹ کی ایک اور ٹیچر بھی تعینات تھی مگر اس نے اپنا تبادلہ بکوٹ کروا لیا ہے ۔۔۔۔ سکول میں صورتحال اس لحاظ سے گھمبیر ہے کہ ۔۔۔۔ پانچ کلاسوں کے ستر طلباء و طالبات کا کورس مکمل کروانا اور ان کو کنٹرول کرنا ایک ٹیچر کے بس کا کام نہیں ۔۔۔۔۔ یہاں کے والدین نے مطالبہ کیا ہے کہ بچوں کے تعلیمی مستقبل کیلئے ۔۔۔۔۔ خدا را ساری اسامیاں پر کی جاویں ۔۔۔۔۔ انہوں نے ناظم وی سی بیروٹ خورد رحیم داد عباسی سے بھی مطالبہ کیا کہ وہ ایک وفد کے ہمراہ ایبٹ آباد کے تعلیمی حکام کے پاس جا کر اس مسئلہ کو حل کروائیں تا کہ بچوں کا تعلیمی مستقبل تباہ نہ ہو ۔۔۔۔۔ آخر میں میری بھی من کے پورے اور تن کے درویش ممبر تحصیل کونسل عزت مآب حضرت قاضی سجاول خان دامت برکاتہم سے ابھی ستدعا ہے کہ ۔۔۔۔۔ وہ سردار فرید خان اور رفاق عباسی سے التجا ہے کہ ۔۔۔۔۔ وہ ڈاکٹر اظہر کے ہمراہ تعلیمی حکام سے اس سکول سمیت یو سی بیروٹ کے سارے سکولوں میں ٹیچرز کی تعیناتی کروائیں ۔۔۔۔ دونوں حضرات کی اس کاوش سے جہاں بچوں کی پڑھائی پوری ہو گی وہاں ہی پارٹی کی نیک نامی بھی ہو گی اور ووٹ بنک بھی بڑھ سکتا ہے ۔۔۔۔؟
------------------------------
بائیس جنوری، 2018
 OUR BHUs IN CIRCLE BAKOT
<read this article also>
 
 
 
BHU of Mohrha, Village Council
Birote Khurd 
today

OUR FATE IN CIRCLE BAKOT
In case of illness, sickness, emergency or pregnancy
 
Patients are in way to hospital on chair and by a Suzuki (not ambulance) en route to hospital
in Rawalpindi, Islamabad, Murree or Muzaferabad (AJK).
Most of patients are breathing their last in way
There are no hospital in any Union Council in Circle Bakote, only BHUs or RHCs 
by political godfathers since 1947.
03rd of Feb, 2014
References

 

(To Be continued)